Shadi Se Pehle Zarori Medical Test In Urdu / Hindi – 4 Medical Test

Shadi Se Pehle Zarori Medical Test In Urdu / Hindi – 4 Medical Test

شادی سے پہلے کروانے والے طبی ٹیسٹ

shadi-se-pehle-zarori-medical-test-1

شادی سے پہلے میڈیکل ٹیسٹ – شادی کا مطلب خوشی ہے۔ ہر ایک کی خواہش ہوتی ہے کہ شادی کے نتیجے میں اپنی زندگی کا آغاز کرنے والا جوڑا ہمیشہ خوش و خرم زندگی گزارے۔

پاکستان کا شمار دنیا کے ان ممالک میں ہوتا ہے جہاں خاندان کے اندر شادی کرنا باعث فخر سمجھا جاتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ پاکستان میں بچوں میں پیدائشی اسامانیتاوں کا تناسب بھی بہت زیادہ ہے۔

اس کی روک تھام کے لیے ماہرین اب تمام لوگوں کو مشورہ دیتے ہیں کہ جہاں شادی کی تیاریوں کے لیے دیگر انتظامات ضروری سمجھے جائیں۔ شادی طے کرنے سے پہلے لڑکوں اور لڑکیوں کے یہ چار بنیادی ٹیسٹ ضرور کر لیے جائیں۔ یہ آپ کو بعد میں مسائل سے بچا سکتا ہے۔

شادی سے پہلے کیے جانے والے ٹیسٹ

کسی ایسے شخص سے ملنا جس کے ساتھ آپ اپنی باقی زندگی گزارنا چاہتے ہیں ایسا جادوئی احساس ہوسکتا ہے۔ لیکن اس سے پہلے کہ آپ ان سے عہد کریں، آپ اس بات کو یقینی بنانا چاہتے ہیں کہ راستے میں کوئی بھی چیز آپ کے تعلقات کو خراب نہیں کر سکتی۔

لہذا یہ مشورہ دیا جاتا ہے کہ آپ اپنی شادی کی تیاریوں سے پہلے کچھ طبی ٹیسٹ کروا لیں۔ کسی بھی ناخوشگوار لمحات سے بچنے کے لیے شادی کرنے سے پہلے اپنے ساتھی کی طبی حالت جاننا بہت ضروری ہے۔

اکثر اوقات، آپ کا ساتھی طبی طور پر ان کے بارے میں کچھ چیزوں سے بھی واقف نہیں ہوتا ہے اور اس سے آپ کی شادی میں مسائل پیدا ہو سکتے ہیں۔

اس لیے شادی سے پہلے چند اہم طبی ٹیسٹ کروانا بہت ضروری ہے۔

View More: Medical Tests Before Marriage – 4 Necessary Tests Before Wedding

ایس ٹی آئی ٹیسٹ

بی بی سی اردو کو انٹرویو دیتے ہوئے رحمان میڈیکل کمپلیکس کی ماہر امراض چشم ڈاکٹر حمیرا اچکزئی کا کہنا تھا کہ اب شادی شدہ جوڑوں کا جنسی طور پر منتقل ہونے والے انفیکشن کا ٹیسٹ کرانا ضروری ہوتا جا رہا ہے۔

ایچ آئی وی، ہیپاٹائٹس بی اور ایس ٹی ڈی جنسی طور پر منتقل ہونے والی بیماریوں میں سے ہیں۔ یہ نہ صرف ایک سے دوسرے میں منتقل ہوتے ہیں بلکہ جنسی ملاپ کے نتیجے میں اسقاط حمل کی صورت میں یہ بیماریاں پیدا ہونے والے بچے میں بھی منتقل ہو سکتی ہیں۔

یہی وجہ ہے کہ ان تمام بیماریوں کی اسکریننگ ضروری ہے۔ تاکہ شادی کے بعد ان بیماریوں کو ایک سے دوسرے انسان اور اگلی نسل میں منتقل ہونے سے بچایا جا سکے۔

 تھیلیسیمیا ٹیسٹ

تھیلیسیمیا ایک موروثی بیماری ہے جو والدین سے بچوں میں منتقل ہو سکتی ہے۔ خون کی کمی اس کی ابتدائی علامات میں سب سے اہم ہے۔

اس مرض کے حوالے سے ماہرین کا خیال ہے کہ اگر ماں اور باپ دونوں کو تھیلیسیمیا مائنر ہو تو ان کی شادی۔ اس کے نتیجے میں بچے میں تھیلیسیمیا میجر ہونے کے امکانات بہت زیادہ ہوتے ہیں۔

ماہرین کے مطابق اگر والدین دونوں تھیلیسیمیا مائنر ہیں یعنی انہیں موروثی خون کی کمی ہے تو ان کی شادی سے پیدا ہونے والے بچے میں تھیلیسیمیا میجر ہونے کے 25 فیصد امکانات ہوتے ہیں جو کہ جان لیوا مرض ہے۔

یہی وجہ ہے کہ ڈاکٹروں کا مشورہ ہے کہ شادی سے پہلے اس کا ٹیسٹ کروا لیا جائے تاکہ علاج سے پہلے مسئلہ حل ہو سکے۔

موروثی بیماریوں کے لیے ٹیسٹ

عام طور پر کئی خاندانی شادیوں کی وجہ سے بیماریوں کے نسل در نسل منتقل ہونے کی تاریخ بہت پرانی ہے۔ ہمارے ملک میں کئی خاندان ایسے ہیں جہاں ذیابیطس، ہائی بلڈ پریشر وغیرہ خاندان کے ہر فرد میں موجود ہیں اور جن کو یہ نہیں ہے۔ ان کے متاثر ہونے کے امکانات بہت زیادہ ہیں۔

اس وجہ سے شادی سے پہلے لڑکے اور لڑکی کی میڈیکل ہسٹری ماہر ڈاکٹر سے چیک کرانا بہت ضروری ہے۔

بلڈ گروپ ٹیسٹ

ماہرین کے مطابق شادی سے پہلے لڑکے اور لڑکی کا بلڈ گروپ ٹیسٹ کروانا بھی بہت ضروری ہے۔ کیونکہ اگر ان دونوں کے بلڈ گروپ کا آرایچ فیکٹر ایک ہی ہے۔ پھر انہیں مستقبل میں بہت سی پیچیدگیوں کا سامنا کرنا پڑے گا۔

کیونکہ دونوں کا بلڈ گروپ ایک دوسرے کو سپورٹ نہیں کرتا۔ اس کے نتیجے میں ان کے دوسرے بچے کے خون کے خلیے ماں کے خون کے خلیات کو تباہ کرنا شروع کر دیتے ہیں۔ اس کے نتیجے میں بچے کا نقصان ہوتا ہے۔

فرٹیلیٹی ٹیسٹ

شادی سے پہلے لڑکی کے بیضہ دانی کے انڈے کے خلیات اور لڑکے کے سپرم کا ٹیسٹ کرانا بھی ضروری ہے کیونکہ اگر ان میں کسی قسم کی نقص یا کمی ہو تو اس کا علاج شادی سے پہلے کروانا فائدہ مند ہے۔ کہ شادی کے بعد کسی بھی قسم کی الجھنوں سے بچا جا سکتا ہے۔

!نتیجہ

شادی سے پہلے میڈیکل ٹیسٹ – جو لوگ یہ مانتے ہیں کہ شادی سے پہلے کے یہ تمام ٹیسٹ وقت اور پیسے کا ضیاع ہیں۔ اگر وہ اپنے اردگرد نظر دوڑائیں تو انہیں بہت سے ایسے جوڑے نظر آئیں گے جو اگر شادی سے پہلے کے میڈیکل ٹیسٹ کروا لیتے تو ٹھیک ہو جاتے۔ اگر وہ ہوتے تو آج خوشگوار ازدواجی زندگی گزار رہے ہوتے۔

Click Here To Get More Information About Health Problems

Leave a Comment

Scroll to Top